Home » پلوامہ سے بالاکوٹ تک: ارناب کی لیک چیٹ کا انسائیکلوپیڈیا

پلوامہ سے بالاکوٹ تک: ارناب کی لیک چیٹ کا انسائیکلوپیڈیا

by ONENEWS

File Photo/Outlook India

بھارت کے فائر برانڈ اینکر پرسن اور نریندر مودی کے قریبی آدمی ارناب گوسوامی کی واٹس ایپ چیٹ لیک ہوگئی ہے جس میں پلوامہ حملے سے لیکر بالاکوٹ اسٹرائیک تک اور کنگنا راناؤت سے لیکر ہریتک روشن تک اور اس کے علاوہ بھی درجنوں اہم معاملات پر اندر کی گفتگو کی گئی ہے۔

سب سے پہلا سوال تو یہ ہے کہ یہ چیٹ کیسے لیک ہوئی۔ اس کو سمجھنے کیلئے آپ کو تھوڑا پیچھے جانا پڑے گا۔ گزشتہ برس ممبئی پولیس نے ٹی وی کے ریٹنگ کے ساتھ فراڈ کرنے پر ارناب گوسوامی سمیت متعدد افراد کو گرفتار کیا تھا۔

ان پر الزام ہے کہ ارناب گوسوامی نے ریٹنگ کمپنی کے سربراہ کے ساتھ ملکر اپنے چینل کی ریٹنگ ہمیشہ زیادہ دکھائی اور اس کے نتیجے میں اشتہارات کا بڑا ریونیو باقی ٹی وی چینلز سے ہتھالیا۔ ممبئی پولیس نے اس فراڈ کے ثبوت بھی پیش کیے ہیں۔

اسی کیس کی تفتیش جاری تھی کہ عدالت کے حکم پر ارناب گوسوامی کے خلاف ایک اور خودکشی کا کیس کھل گیا جس پر انہیں گرفتار بھی کیا گیا۔ اس کیس میں ارناب گوسوامی پر الزام ہے کہ اس نے ایک کاریگر سے اپنے ٹی وی چینلز کے دفاتر اور اسٹوڈیوز بنوائے اور پھر اس کو معاوضہ ادا نہیں کیا جس پر وہ دیوالیہ ہوگیا۔ کاریگر نے خودکشی سے قبل نوٹ لکھا اور اس میں خودکشی کی وجہ یہی بتائی۔

ان دونوں کیسوں کی تفتیش ممبئی پولیس کر رہی ہے اور ممبئی پولیس نے یہ چیٹ ثبوت کے طور پر عدالت میں پیش کی ہے۔ چیٹ ارناب اور اس ریٹنگ کمپنی کے سربراہ کے مابین ہے اور یہ لیک شدہ چیٹ نارمل اے فور سائز پیپر پر 500 پیجز سے زیادہ پر پھیلی ہوئی ہے۔

سماء ڈیجیٹل کے پاس پوری فائل دستیاب نہیں مگر بھارتی میڈیا اور سوشل میڈیا کے ذریعے اس کے بعض حصوں تک رسائی حاصل ہوگئی ہے۔

اس چیٹ کا سب سے خوفناک عنصر یہ ہے کہ ارناب گوسوامی کو بالاکوٹ اسٹرائیک کے بارے میں پہلے سے ہی پتہ تھا اور وہ اپنے دوست کو اس کے بارے میں بتا رہا ہے کہ کچھ بہت بڑا ہونے والا ہے اور جب بالاکوٹ اسٹرائیک ہوا تو اس کا دوست پوچھتا ہے کہ آپ اس کی بات کر رہے تھے جس پر ارناب ہاں میں جواب دیتا ہے۔

اسی طرح پلوامہ حملے میں جب 40 سے زائد بھارتی اہلکار ہلاک ہوئے تو ارناب گوسوامی نے کہا کہ نریندر مودی کو اب بھاری ووٹ ملیں گے۔ ارناب نے اس کی سب سے پہلے کوریج کرنے پر شاندار انداز میں خوشی منائی اور اس کو ’اپنی جیت‘ قرار دے دیا۔

اس چیٹ میں دونوں افراد مودی کیلئے ’بگ مین‘ اور امیت شاہ کیلئے ’اے ایس‘ کا کوڈ ورڈ استعمال کرتے ہیں جبکہ وہ وزیراعظم ہاؤس اور وزرات اطلاعات سمیت دوسرے بھارتی اداروں کے بارے میں ایسے بات کرتے ہیں جیسے سب کچھ ان کے کنٹرول میں ہو۔

مثال کے طور پر دونوں مختلف بھارتی چینلز کا حوالہ دیتے ہوئے کہتے ہیں کہ اس کو بند کروا دو، بعض میڈیا کے بارے میں وہ سازشیں بھی رچا رہے ہیں کہ ان کو کیسے بدنام کیا جائے۔ دونوں افراد ٹی وی چینل کو بلیک میل کرنے کی منصوبہ بندی بھی کرتے دکھائی دے رہے ہیں۔

اس چیٹ میں کنگنا راناؤت اور ہریتک روشن کے بارے میں سنسنی خیز انکشافات کیے گئے ہیں۔ ارناب اپنے دوست کو مسیج کرکے بتاتے ہیں کہ اس نے کنگنا کا دو گھنٹے کا انٹرویو کیا ہے اور یہ انٹرویو چلتے ہی ریٹنگ کے سارے ریکارڈز توڑ دے گا۔ پھر وہ ہریتک کے ساتھ ملاقات اور انٹرویو کا ذکر کرتا ہے تو اس کا دوست کہتا ہے کہ آف دی ریکارڈ کیا باتیں ہوئیں۔

ارناب جواب میں ہریتک کو ’بھولا‘ اور کنگنا کو ’نفسیاتی مسائل کا شکار‘ قرار دیتے ہیں۔ ارناب کے مطابق ہریتک نے انہیں بتایا کہ کنگنا ایک نفسیاتی عارضے کا شکار ہے۔ اس عارضے میں متاثرہ انسان کو لگتا ہے کہ اگلا بندہ اس سے محبت کرتا ہے مگر اصل میں ایسا نہیں ہوتا۔ ارناب اور اس کے دوست نے یہ تجزیہ بھی کیا کہ کنگنا کا کیریئر ختم ہوچکا ہے کیوں کہ اس نے ریڈ لائن کراس کرلی ہے۔

ارناب کے چیٹ کے مطابق ہریتک روشن نے بتایا کہ کنگنا ’سیکشول جیلسی‘ کا شکار ہے۔

اسی طرح ارناب گوسوامی جب بھی مودی سے ملتا ہے تو اپنے دوست کو پہلے اور بعد میں پوری تفصیل بتا دیتا ہے۔ امیت شاہ کے ساتھ ملاقات سے پہلے ارناب اپنے دوست سے کہتا ہے کہ فلاں چینل کے خلاف تین ایسے مضبوط پوائنٹس بتاؤ جو امیت شاہ کیلئے نقصان دہ ہیں۔ یعنی ارناب ملاقات میں امیت شاہ کو اس چینل کے خلاف کارروائی پر آمادہ کرنے جارہے تھے۔

ایک اور گفتگو میں ریٹنگ کمپنی کا مالک ارناب سے کہتا ہے کہ ان کو وزیراعظم آفس میں کسی بڑی پوسٹ پر لگوا دو۔ ارناب ان کو یقین دہانی کروا دیتا ہے اور ایک موقع پر جب وزارت اطلاعات کا سیکریٹری تبدیل ہوتا ہے تو ارناب اسے بتاتا ہے کہ وہ اپنا آدمی ہے۔

ایک موقع پر ارناب کہتا ہے کہ بھلے ہم ٹی وی پر کچھ بھی بتائیں مگر مودی حکومت میں ملکی معیشت کا بیڑہ غرق ہوچکا ہے اور یہ مودی حکومت کی سب سے بڑی ناکامی ہے۔ اس میں دونوں مودی کے وزیر خزانہ کو بھی تنقید کا نشانہ بناتے ہیں اور تجویز دیتے ہیں کہ مودی کو دوسری بار الیکشن جیتنے کے بعد وزیر خزانہ کو تبدیل کردینا چاہیے۔

دلچسپ امر یہ ہے کہ ارناب گوسوامی اپنے دوست کو یہ باور بھی کرواتا ہے کہ واٹس ایپ کی چیٹ ’اینڈ ٹو اینڈ انکرپٹڈ‘ ہوتی ہے۔ اسے ہم دونوں کے علاوہ خود واٹس ایپ بھی نہیں پڑھ سکتا مگر ارناب شاید بھول گئے تھے کہ ممبئی پولیس پڑھ سکتی ہے۔

پاکستان کا موقف

بھارت نے پلوامہ حملے بعد اس کی ذمہ داری پاکستان پر ڈال دی تھی مگر پاکستان نے اس الزام کو مسترد کرتے ہوئے کہا تھا کہ بھارت ثبوت پیش کرے۔ اس چیٹ کے لیک ہونے کے بعد پاکستان کے نیشنل سیکیورٹی ایڈوائزر معید یوسف کا کہنا ہے کہ مودی نے انتخابات جیتنے کیلئے پلوامہ کا حملہ کروایا۔ وہ اس معاملے کو عالمی فورم پر لیکر جائیں گے۔

You may also like

Leave a Comment