Home » وطن عزیز میں دہشت گردی کا ذمہ دار کون؟

وطن عزیز میں دہشت گردی کا ذمہ دار کون؟

by ONENEWS

وطن عزیز میں دہشت گردی کا ذمہ دار کون؟

بھارتی وزیر اعظم نریندر مودی لداخ کے میدان میں چین سے شکست کھانے کے بعد تلملائے بیٹھے ہیں۔ بھارتی عوام اور اپوزیشن نے شکست بارے سوال کر کے ان کے ناک میں دم کر رکھا ہے۔ چین کو صرف وہ برا بھلا ہی کہہ سکتے ہیں، عملاً کوئی اقدام نہیں کر سکتے۔ اس کی نسبت وہ عوام کا غصہ ٹھنڈا کرنے کیلئے پاکستان کے خلاف کچھ کرنے کا ارادہ رکھتے ہیں مگر ہماری بھرپور تیاری اور جوابی وار سے ڈرتے بھی ہیں۔ لہذا وہ تخریب کاری اور دہشت گردی کا اپنا پرانا طریقہ اپناتے ہوئے افغانستان میں این ڈی ایس اور داعش سے مل کر پاکستان میں دہشت گردی کر رہے ہیں۔

را، این ڈی ایس اور داعش مشترکہ طور پر پاکستان میں دہشت گردی کر رہی ہیں اور اس کے ثبوت میں بلوچستان میں سیکیورٹی فورسز پر حملوں میں ایک بار پھر اضافہ دیکھا جارہا ہے۔ابھی گزشتہ دنوں ہی پاک فوج کی پیٹرولنگ ٹیم معمول کے گشت پر تھی کہ اچانک دہشتگردوں نے پنجگور کے قریب کاہان ویلی میں ان پر فائرنگ شروع کر دی۔دہشت گردوں کی فائرنگ کے نتیجے میں تین جوان شہید جبکہ افسر سمیت 8 زخمی ہو گئے۔ اس سے قبل ارضِ پاک سے فسادیوں کے خاتمے کے لئے خفیہ اطلاعات پر پاک فوج نے شمالی وزیرستان میں آپریشن کیا تھا جس میں 4 جوان شہید جبکہ امن کے چار دشمن بھی اپنے انجام کو پہنچ گئے تھے۔19 مئی کو بلوچستان میں دہشت گردوں کے حملوں کے 2 مختلف واقعات میں 7 سیکیورٹی اہلکار شہید ہوگئے تھے۔8 مئی کو بلوچستان میں سیکیورٹی فورسز پر دہشت گردوں کے حملے میں میجر سمیت 6 جوان شہید ہوگئے تھے۔

ایک دور تھا جب شمالی وزیرستان دہشتگردوں کا گڑھ ہوا کرتا تھا۔ اس علاقے کو دہشتگردوں نے مکمل طور پر یرغمال بنا کررکھا تھا۔ ان کی جڑیں پورے ملک میں پھیلی ہوئی تھیں۔ وہ اپنے مخصوص نظریات مسلط کرنا چاہتے تھے۔ ان دہشت گردوں کی لگامیں افغانستان میں موجود بھارتی قونصل خانوں میں بیٹھے را کے افسران کے ہاتھ میں تھیں۔ دہشتگردی کا ناسور حد سے بڑھا تو کڑے آپریشن کا سیاسی و عسکری قیادت نے فیصلہ کرتے ہوئے اس پر عمل بھی کیا۔پشاور میں آرمی پبلک سکول پر حملہ اور 150 سے زائد بچوں و اساتذہ کی شہادت دہشت گردوں کے خلاف آپریشن کا ٹرننگ پوائنٹ ثابت ہوا۔ پاک فوج دہشتگردوں پر قہر بن کر ٹوٹی۔ خود کو ناقابل تسخیر سمجھنے والوں میں سے بہت سے مارے گئے، کچھ افغانستان بھاگ گئے اور کئی پاکستان ہی میں دبک کر بیٹھ گئے۔

آپریشن ضرب عضب میں دہشت گردوں کی واقعتا کمر توڑ دی گئی۔ یہ لوگ عوامی حمایت اور ہمدردی سے اس وقت یکسر محروم ہوگئے۔پاک فوج کے دستوں کو یرغمال بنا کر شہید کیا جانے لگا۔ ایسا کوئی مذہبی ومسلکی گروپ ہرگز نہیں کر سکتا۔ یہ سب تو دشمن کا ایجنڈا تھا۔ دشمن کے ایجنڈے پر کام کرنے والے دشمن سے بھی بدتر ہیں۔ ان کے ڈانڈے بھارت سے ملتے نظر آئے۔ ان کی باگیں کلبھوشن جیسے دہشت گردوں کے ہاتھ میں تھیں۔ بھارت کے پے رول پر کام کرنے والوں کے خلاف حکومت پاک فوج اور قوم ایک پیج پر آگئی اور بدستور ہے۔

دشمن کے ہاتھوں میں کھیلنے والوں کے شمالی وزیرستان میں مضبوط ٹھکانے اور اسلحہ ساز کارخانے تھے۔ دہشت گردوں اور ان کے ٹھکانوں‘ اسلحہ اور کارخانوں کو اڑا کے رکھ دیا گیا۔پاکستان سے فرار ہونے والے دہشت گردوں کو بھارت کے ایماء پر افغانستان میں تحفظ فراہم کیا گیا۔ پاکستان میں چھپے دہشت گرد بھی موقع ملتے ہی دشمن کے ایجنڈے کی تکمیل کے لئے کوشاں نظر آتے ہیں۔ گو ان میں پہلے جیسی دہشت گردی کی سکت نہیں رہی تاہم وہ چھوٹی موٹی دہشت گردی کی وارداتوں سے ملک میں بدامنی کا تاثر پیدا کرنے کی کوشش ضرور کرتے ہیں۔

وزیر خارجہ شاہ محمود قریشی نے بھی گزشتہ دنوں اس خدشے کا اظہار کیا تھا کہ بھارت کے پاکستان میں سلینگ سیل پھر متحرک ہو سکتے ہیں۔ لداخ میں بھارت کو چین سے مسلسل شکست اور ہزیمت کا سامنا ہے۔ مقبوضہ کشمیر اور بھارت کے اندر بھی حالات حکومت کے قابو سے باہر ہو رہے ہیں۔ روایتی طور پر بنیا سرکار ایسے حالات میں توجہ ہٹانے کے لئے پاکستان کے خلاف محاذ آرائی میں اضافہ اور دہشتگردی کا سلسلہ تیز کر دیتی ہے۔اسی خفت کو مٹانے کیلئے چند روز قبل کراچی میں سٹاک ایکسچینج پر دہشتگردی کا بھیانک منصوبہ بنایا گیاجو گارڈز پولیس اور رینجرزنے بڑی مہارت سے ملیامیٹ کر دیا۔اب شمالی وزیرستان میں دہشتگردی کی پلاننگ ہو رہی تھی جو چار جوانوں کی شہادت سے ناکام بنا دی گئی۔ اپنا آج قوم کے کل پر قربان کرنے والے ہمارے محسن اور ہیرو ہیں۔

بھارتی خفیہ ایجنسی را کے ساتھ گٹھ جوڑ کرکے پاکستان میں دہشتگردی میں ملوث افغان خفیہ ایجنسی این ڈی ایس کے خلاف امریکی میڈیا بھی بول پڑا۔ امریکی جریدے فارن پالیسی نے لکھا ہے کہ افغان خفیہ ایجنسی این ڈی ایس امریکی سی آئی اے کی مدد سے پاکستان میں دہشت گردی کی کارروائیوں میں ملوث ہے۔یوں امریکی میڈیا نے افغان خفیہ ایجنسی این ڈی ایس کا کچا چٹھا کھول کر دنیا کے سامنے رکھ دیا۔ جریدے کے مطابق این ڈی ایس انتہائی خطرناک اور ظالم ایجنسی ہے جو مخالفین کے خلاف کسی بھی حد تک جاسکتی ہے۔ این ڈی ایس نے افغانستان کو پولیس اسٹیٹ میں بدل دیا ہے۔این ڈی ایس افغانستان میں موجود اعلیٰ تعلیم یافتہ پاکستانیوں کے اغوا اور انہیں پاکستان کے خلاف استعمال کرنے کی مذموم کارروائیوں اور کابل میں پاکستانی سفارتکاروں کوہراساں کرنے کے علاوہ پاکستان میں تنصیبات کو نشانہ بنانے کے لیے افغانستان سے دہشتگرد بھیجنے میں بھی ملوث رہی ہے۔

بہرحال چند بیرونی عناصر افغانستان کی زمین کو پاکستان اور دیگر ممالک کے خلاف استعمال کرکے خطے کی صورتحال کو متاثر کرنا چاہتے ہیں۔ ہمیں ‘را’ اور ‘این ڈی ایس’ کے گٹھ جوڑ پر شدید تحفظات ہیں۔ افغانستان کی غیر مستحکم صورتحال سے کئی دہشت گرد تنظیمیں فعال ہیں۔ افغانستان میں سیکیورٹی کی بدترین صورتحال کے ہوتے ہوئے مشکلات کا ذمہ دار دوسروں کو ٹھہرانا درست نہیں بالخصوص دہشت گردوں کے محفوظ ٹھکانوں سے متعلق بار بار دہرائے گئے دعوے صرف بیان بازی ہیں۔

مزید :

رائےکالم

You may also like

Leave a Comment