0

موٹروے واقعہ:مرکزی ملزم کاقریبی دوست گرفتار،کیس میں دہشتگردی کی دفعات شامل

Motorway

موٹروے واقعہ میں ایک اور پیش رفت سامنے آگئی۔ پولیس نے مرکزی ملزم عابد کے قريبی دوست اقبال عرف بالا مستری کو حراست ميں لے ليا۔ جب کہ کیس میں دہشت گردی کی دفعات بھی شامل کرلی گئی ہیں۔

پوليس کے مطابق ملزم اقبال عرف بالا مستری کو ساہيوال کے قريب سے پکڑا گيا۔ ملزم ريپ کيس ميں ملوث نہيں، ليکن گينگ کا حصہ ہے۔

گرفتار ملزم شفقت نے دوران تفتيش بالا مستری کا نام ليا تھا۔ ملزم شفقت نے پوليس کو بتايا تھا کہ مرکزی ملزم عابد نے اسے اور اقبال عرف بالا مستری کو فون کر کے لاہور بلايا تھا، تاہم اقبال واردات سے پہلے راستے سے ہی واپس چلا گيا۔ يہ گينگ اس سے پہلے کئی وارداتيں اکٹھے کر چکا ہے۔

واضح رہے کہ مرکزی ملزم عابد تاحال گرفتار نہیں ہوسکا، جس کیلئے پولیس کے چھاپے جاری ہیں۔

دوسری جانب پولیس کی جانب سے کیس کے ملزم شفقت علی کو آج منگل 15 ستمبر کو عدالت ميں پيش کيا گیا۔ اس موقع پر آئی جی پنجاب کا کہنا تھا کہ کیس میں دہشت گردی کی دفعات بھی شامل کی گئی ہیں۔

واضح رہے کہ سیالکوٹ موٹروے پر خاتون سے زيادتی کے کيس ميں ملوث ملزم شفقت علی کو 14 ستمبر کو ديپالپور سے گرفتار کیا گیا تھا۔ وزيراعلیٰ پنجاب عثمان بزدار نے ٹویٹر پيغام ميں تصدیق کرتے ہوئے لکھا تھا کہ ’’سیالکوٹ موٹروے کے دلخراش واقعہ میں خاتون سے زیادتی میں ملوث شفقت علی گرفتار ہو چکا ہے، جس کا ڈی این اے میچ کر چکا اور اس نے اعتراف جرم بھی کر لیا ہے‘‘۔

پوليس ذرائع کا کہنا تھا کہ شفقت کو ملزم وقار اور عباس کی نشاندہی پر گرفتار کيا گيا، جب کہ زيادتی کا مرکزی ملزم عابد اب تک مفرور ہے۔ مرکزی ملزم عابد کی بيوی حراست ميں لے لیا گیا ہے۔ شفقت علی نے ابتدائی بيان میں عتراف کیا ہے کہ اسلحہ ديکھ کر خاتون نے شيشہ نہ کھولا تو عابد نے پتھر سے شيشہ توڑ ديا۔ خاتون سڑک سے نيچے آنے کو تيار نہیں تھی لیکن بچوں کو لے کر گئے تو خاتون بھی آگئی۔

ملزم نے بیان میں بتایا کہ عابد علی نے مجھے فون کرکے لاہور بلايا اور واقعے کے وقت موٹر وے پر گھات لگا کر بيٹھے تھے۔

پولیس کے مطابق عابد اور شفقت دونوں کا تعلق ضلع بہاولنگر سے ہے اور دونوں نے شيخوپورہ ميں بھی دوران واردات زيادتی کی کوشش کی۔ دونوں ملزمان ٹريکٹر ٹرالياں لوٹتے تھے۔ وقوعہ کے روز دونوں ملزمان فيکٹری ايريا سے شاہدرہ آئے اور شاہدرہ سے رکشے ميں کرول جنگل پہنچے۔ عابد کا آخری رابطہ شفقت سے 3 روز پہلے ہوا تھا، عابد اور شفقت نے 11 وارداتيں ايک ساتھ کيں۔

پس منظر

تمبر 9 بدھ کی رات کو فرانس سے چھٹیوں پر پاکستان آئی خاتون اپنے کم سن بچوں کیساتھ لاہور سے براستہ سیالکوٹ موٹروے گجرانوالہ جا رہی تھی۔ راستے میں پیٹرول ختم ہوا تو خاتون نے گاڑی روک دی۔ اس دوران 2 نامعلوم افراد آئے اور خاتون کو بچوں سمیت قریبی کھیتوں میں لے گئے۔ ملزمان نے پہلے خاتون کو زیادتی کا نشانہ بنایا اور جاتے ہوئے قیمتی سامان بھی چھین کر فرار ہوگئے، جس میں ایک لاکھ نقدی، زیورات اور ڈیبٹ کارڈ و دیگر اہم اشیا شامل تھیں۔

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں