Home » عدالت نے کیپٹن صفدر کو ضمانت پر رہا کردیا

عدالت نے کیپٹن صفدر کو ضمانت پر رہا کردیا

by ONENEWS

کراچی سٹی کورٹ نے مریم نواز کے شوہر کیپٹن صفدر کو ضمانت پر رہا کردیا ہے۔ ان کو گزشتہ رات پولیس نے کراچی کے نجی ہوٹل سے گرفتار کیا تھا۔

کیپٹن صفدر کو جوڈیشل مجسٹریٹ ضلع شرقی کی عدالت میں پیش کیا گیا۔ پولیس نے عدالت سے استدعا کی کہ ان کو مزید تفتیش کی ضرورت ہے۔ ریمانڈ دیا جائے۔ مسلم لیگ نواز کے وکلاء نے موقف اختیار کیا کہ یہ سیاسی مقدمہ ہے اور اس میں شامل تمام دفعات بھی قابل ضمانت ہیں۔ اس لیے ضمانت دی جائے۔

عدالت نے فریقین کے دلائل سننے کے بعد ایک لاکھ کے مچلکے جمع کرانے کا حکم دیتے ہوئے کیپٹن صفدر کو ضمانت پر رہا کردیا۔

وکلاء نے ایک لاکھ روپے کیش عدالت میں جاری کروانے کے بعد عدالت سے ریلیز آرڈر وصول کیا اور کیپٹن صفدر کو لیکر عدالت کے احاطے سے روانہ ہوگئے۔

اس سے قبل کراچی میں پریس کانفرنس کے آخر میں مریم نواز نے بتایا کہ کیپٹن صفدر کوعدالت سے ضمانت مل گئی ہے اور وہ ساتھ ہی کراچی سے جائیں گے۔

کیپٹن صفدر کے خلاف تحریک انصاف کے ایک کارکن نے پولیس کو درخواست دیتے ہوئے موقف اختیار کیا ہے کہ کیپٹن صفدر نے مزار قائد کے احاطے میں نعرے بازی کرکے مزار قائد کی بے حرمتی کی ہے۔ درخواست دہندہ نے الزام عائد کیا کہ کیپٹن صفدر نے انہیں جان سے مارنے کی دھمکیاں دیں۔

گزشتہ روز مریم نواز نے مزار قائد پر حاضری دے کر پھول چڑھائے تھے۔ اس دوران کیپٹن صفدر نے ووٹ کو عزت دو اور مادر ملت زندہ باد کے نعرے لگوائے۔ مادر ملت فاطمہ جناح کو آمر ایوب خان کی حکومت میں غدار قرار دیا گیا تھا اور انتخابی مہم کے دوران فاطمہ جناح کی کردار کشی کی گئی۔

کیپٹن صفدر کی ہوٹل سے گرفتاری کی ویڈیو بھی منظرعام پر آگئی ہے جس میں وہ مادر ملت زندہ باد اور ایوب خان مردہ باد کے نعرے لگاتے نظر آرہے ہیں۔

سندھ حکومت نے اس گرفتاری سے مکمل لاتعلقی کا اظہار کرتے ہوئے مریم نواز اور مسلم لیگ نواز کے ساتھ اظہار افسوس کیا ہے اور معاملے کی مکمل تحقیقات کا یقین دلایا ہے۔ مریم نواز نے کہا ہے کہ سیکٹر کمانڈر کے دفتر میں آئی جی سندھ سے زبردستی وارنٹ پر دستخط کروائے گئے۔

پاکستان ڈیموکریٹک موومنٹ کے سربراہ مولانا فضل الرحمان اور پیپلز پارٹی کے سینیئر رہنما راجہ پرویز اشرف کے ہمراہ کراچی میں پریس کانفرنس کرتے ہوئے مریم نواز نے کہا کہ ’آئی جی سندھ سے پہلے کہا گیا کہ آپ وارنٹس پر دستخط کریں، گرفتاری رینجرز والے کر لیں گے۔ مگر دستخط کے بعد کہا گیا کہ گرفتاری بھی پولیس ہی کرے گی۔‘

انہوں نے کہا کہ کیپٹن صفدر کی گرفتاری میں سندھ حکومت ملوث نہیں ہے۔ سوچے سمجھے منصوبے کے تحت یہ اقدام کر کے یہ تاثر دینے کی کوشش کی گئی ہے تاکہ حزب مخالف اتحاد میں دراڑ ڈالی جائے مگر ’ہم بچے نہیں ہیں۔‘

وزیراعلیٰ سندھ اور بلاول بھٹو زرداری نے مریم نواز کو ٹیلی فون کرکے باور کروادیا ہے کہ گرفتاری میں سندھ حکومت کا کردار نہیں ہے۔ پیپلز پارٹی کی قیادت اور سندھ کو اس پر افسوس ہے۔ انہوں نے واقعے کی شفاف تحقیقات کی یقین دہانی کروائی ہے۔

میاں نواز شریف کے ترجمان محمد زبیر کا ایک آڈیو کلپ سوشل میڈیا پر وائرل ہوا ہے جس میں وہ کہتے ہیں کہ آئی جی پولیس کو اغوا کرکے سیکٹر کمانڈر کے آفس لے جایا گیا جہاں ایڈیشنل آئی جی پہلے سے موجود تھے۔ وہاں ان سے زبردستی دستخط کروائے گئے۔

You may also like

Leave a Comment