Home » عثمان بزدار کا کلّہ

عثمان بزدار کا کلّہ

by ONENEWS

عثمان بزدار کا ”کلّہ“

بدھ اور جمعرات کی درمیانی رات تھی،کوئی ساڑھے گیارہ بجے برادرمحترم منیر احمد خان کا فون آیا۔ خان صاحب ایک پرانے سیاسی کارکن ہیں۔ طلبہ سیاست میں بھی سرگرم رہے، اور بعدازاں قومی سیاست میں بھی نام بنایا۔مسلم لیگ کے مختلف برانڈز سے استفادہ کرتے ہوئے پیپلزپارٹی سے مصافحہ کیا لیکن یہاں زرداری صاحب ان کو اور وہ زرداری صاحب کو راس نہ آئے۔تحریک انصاف کو بھی سونگھتے پائے گئے لیکن سیاسی فعالیت سے دِل بھر سا گیا تھا۔کالم نگاری سے دِل لگایا، اور ایک عدد تھنک ٹینک بھی ایجاد کر لیا۔اپنے حلقہ احباب میں وہ بہت باخبر سمجھے جاتے ہیں، کان، آنکھیں اور ناک ہر دم محاذ پر رہتے ہیں۔ سونگھنے، سننے اور دیکھنے کی صلاحیت بہت سوں سے زیادہ ہے۔اس لیے جب ان کی طرف سے کوئی بات کہی جاتی یا کوئی اشارہ کیا جاتا ہے، تو اسے نظر انداز کرنا مشکل ہو جاتا ہے۔اس پر یقین نہ کریں تو بھی اسے فوری طور پر رد نہیں کیا جا سکتا۔انہوں نے فون پر سرگوشی کی کہ وزیراعلیٰ پنجاب عثمان بزدار کی رخصتی کا فیصلہ کر لیا گیا ہے۔بنی گالہ میں میٹنگیں جاری ہیں،اور چند لمحوں بعد اس کا باقاعدہ اعلان کر دیا جائے گا۔

مَیں نے فوراً عزیزم عمر شامی صاحب کو اطلاع دی، ان کو پہلے ہی خان صاحب ”اعتماد“ میں لے چکے تھے۔صحافتی نقطہ نظر سے خبر اس قدر ہیجان انگیز تھی کہ نیند آنکھوں سے بھاگ گئی۔ کسی نہ کسی طور لیٹا رہا لیکن ”صبح ہونے تک“ دو تین بار اٹھ کر آن لائن اخبار کی سرخیاں چیک کیں کہ دھماکہ نہ ہو گیا ہو۔خان صاحب کو تو یہ عرض کر چکا تھا کہ اس کارروائی کا کوئی جواز نظر نہیں آ رہا۔ عثمان بزدار سے ایسی کوئی حرکت سرزد نہیں ہوئی کہ رات کی تاریکی میں ان کے اقتدار پر شب خون مارا جائے،اس لیے مجھے تو ان کا کلّہ ابھی تک مضبوط نظر آ رہا ہے۔خان صاحب کے تجزیینے اپنی ٹامک ٹوئیاں ماریں،اور میری نیند سے آنکھ مچولی کا سبب بن گیا۔صبح اُٹھ کر دیکھا تو عثمان بزدار اپنی جگہ تھے، بلوچستان میں جام کمال کی میزبانی کا لطف اٹھا رہے تھے۔ ان کے ایک حلقہ بگوش سے پوچھا تو اس نے قہقہہ لگا کر جواب دیا کہ ایک بڑے کالم نگار اب تک اٹھارہ بار ان کی سبکدوشی کی پیش گوئی کر چکے ہیں،لیکن وہ الحمد للہ یہیں ہیں اور جب تک وزیراعظم عمران خان چاہیں گے یہیں رہیں گے۔تازہ ترین اطلاعات کے مطابق وزیراعظم کی اس چاہت میں کوئی تبدیلی نہیں آئی۔وہ ان کے پیچھے اسی طرح کھڑے ہیں جس طرح وزیراعلیٰ نواز شریف کے پیچھے جنرل ضیاء الحق کھڑے تھے۔

دلچسپ بات یہ ہے کہ جب غیر جماعتی انتخابات کے نتیجے میں وفاقی اور صوبائی حکومتیں بنیں۔ مرکز میں وزیراعظم جونیجو کے سر یہ ہما بٹھایا گیا تو پنجاب میں نواز شریف صاحب کی تاج پوشی ہو گئی۔ ایک وقت ایسا آیا کہ وزیراعلیٰ نواز شریف کے خلاف بغاوت ہو گئی،کئی ارکان اسمبلی نے ان کے خلاف جھنڈا بلند کر دیا۔ چودھری پرویز الٰہی کا راستہ ہموار نظر آ رہا تھا، جنرل ضیاء الحق کی پشتیبانی کے بارے میں بھی چہ میگوئیاں شروع ہو گئی تھیں کہ وہ لاہور آئے اور نواز شریف کا کلّہ مضبوط ہونے کا اعلان کر دیا۔اس سرگرمی کے پس ِ پردہ محرکات کیا تھے،اس حوالے سے کئی لوگ کئی کہانیاں سناتے ہیں لیکن ان سے قطع نظر نواز شریف اپنی جگہ ایسے جمے کہ وزیراعظم بن کر دم لیا۔ عثمان بزدار کو بھی وزیراعظم عمران خان کی بھرپور حمایت حاصل ہے۔ انہی کی نظر کرم نے انہیں تخت ِ لاہور پر بٹھایا، اور اسی کے سہارے وہ اس پر جم کر بیٹھے ہیں۔

عثمان بزدار نے جب یہ منصب سنبھالا تو وہ قومی تو کیا صوبائی سطح پر بھی معروف نہیں تھے۔پہلی بار صوبائی اسمبلی کے رکن بنے تھے۔ خان صاحب کو ان کی ”تنہائی“ اور ”خاموشی“ نے متاثر کیا یا اس سے بھی بڑھ کر کسی اور صلاحیت نے، وجہ جو بھی ہو، نگاہِ انتخاب ان پر ٹھہر گئی۔جغادریوں اور طرم خانوں کو حیران پریشان چھوڑ کر انہوں نے وہ کرسی سنبھال لی، جس پر کچھ عرصہ پہلے تک شہباز شریف رونق افروز تھے۔ان کی حرکت میں برکت تھی، اور برکت میں حرکت۔ عثمان بزدار کی شخصیت ان سے یکسر مختلف تھی،…… بے رنگ، بے بو، بے ذائقہ……جب سے انہوں نے حلف اٹھایا ہے، ان کے خلاف میڈیائی سرگرمیاں جاری ہیں۔ تحریک انصاف کے لیے ہر حد سے گذر جانے والوں کی سمجھ میں بھی نہیں آ رہا کہ یہ ہوا کیا ہے۔ بڑے بڑے اینکر اور تجزیہ کار ان پر برس رہے ہیں، انہیں دھکا دے کر گرانے کی کوشش میں ہیں،لیکن عثمان بزدار وہیں کے وہیں ہیں۔ 90شاہراہ قائداعظم اور7کلب روڈ ان کے دم سے آباد ہیں۔وہ اب دو سال پہلے والے وزیراعلیٰ نہیں ہیں، تجربے کی دو سالہ دولت اُن کی جیب میں ہے۔ان کا رنگ بھی کھل رہا ہے۔ ان کا ذائقہ بھی محسوس ہو رہا ہے،اور بے بو بھی وہ نہیں رہے۔

اسلام آباد ان کی خوشبو میں مست ہے کہ لاہور تاریخی طور پر اسلام آباد کا دردِ سر رہا ہے۔ یہاں کے باسی پر پرزے نکالتے رہے ہیں۔بھٹو صاحب کو بھی کئی وزرائے اعلیٰ تبدیل کرنا پڑے تھے، نواز شریف کو اپنے بھائی کا پہرا یہاں بٹھانا پڑا تھا۔وزیراعظم عمران خان چین کی بانسری یوں بجا رہے ہیں کہ لاہور ان کی مرضی سے سوتا، جاگتا، کھاتا، پیتا، روزہ رکھتا اور افطار کرتا ہے۔حکومت جیسی بھی ہے، اور جس بھی رفتار سے چل رہی ہے، مالی بدعنوانی کا کوئی الزام لگایا جا سکا ہے، نہ اس حوالے سے ہنگامہ اٹھایا جا سکا ہے۔گندم، چینی کے معاملات بھی وفاقی سطح پر طے ہوئے ہیں، جزا اور سزا دینے والے وہیں تشریف فرما ہیں، اور کچھ ہاتھ نہیں آ رہا تو ان کے ہیلی کاپٹر دوروں کی تفصیلات اکٹھی کی جا رہی ہیں۔آزادیئ صحافت کے دعویدار ان پر خرچ آنے والے پٹرول کا حساب کر رہے ہیں،12کروڑ عوام کے صوبے کے چیف ایگزیکٹو کو بس میں سفرکرنا چاہیے یا تانگے پر۔ دور دور تک پھیلے ہوئے صوبے کا دورہ کرنے کے لیے ہیلی کاپٹر بھی استعمال ہو گا، اور اس کے لیے پٹرول کی ضرورت بھی ہو گی۔

صوبے کا چیف ایگزیکٹو اعتکاف میں بیٹھنے سے تو رہا۔ ایک الزام ان پر یہ لگا کہ انہوں نے اپنے آبائی علاقے میں دِل کا ہسپتال اپنے والد سردار فتح محمد خان بزدار کے نام سے منسوب کر دیا ہے، اور اس کے لیے صوبائی اسمبلی سے باقاعدہ قرارداد بھی منظور کرا لی ہے۔سردار فتح محمد صوبائی اسمبلی کے رکن رہے اور اپنے علاقے میں قدر کی نگاہ سے دیکھے جاتے تھے۔ جب لاہور میں شہباز شریف ہسپتال، اور نواز شریف ہسپتال موجود ہوں، ملتان میں چودھری پرویزالٰہی کارڈیالوجی انسٹیٹیوٹ قائم ہو چکا ہو، اِسی شہر میں نواز شریف زرعی یونیورسٹی کا بورڈ بھی لگا ہوا ہو، وہاں اگر عثمان بزدار نے اپنے والد کی وصیت کے مطابق دِل کا ہسپتال اپنے علاقے میں بنوا کر اس پر ان کے نام کا بورڈ لگوا دیا ہے، تو وہ گردن زدنی کیسے ہو سکتے ہیں؟ جہاں تک ترقیاتی منصوبوں کا تعلق ہے وفاقی محصولات کی کمی نے صوبوں کے وسائل بھی کم کر دیے ہیں،نو من تیل نہیں ہو گا تو رادھا ناچے گی کیا…… جتنا تیل مل رہا ہے،اس کے مطابق رادھا کمال دکھا رہی ہے…… آئندہ کی خبر خدا جانے۔

(یہ کالم روزنامہ ”پاکستان“ اور روزنامہ ”دُنیا“ میں بیک وقت شائع ہوتا ہے)

مزید :

رائےکالم

You may also like

Leave a Comment