0

حکومت کااحساس ایمرجنسی کیش کابجٹ203ارب روپے کرنیکا اعلان

اسلام آباد:اہم پریس کانفرنس میں شبلی فراز،ثانیہ نشتر موجود

 

 

شبلی فراز کا کہنا ہے کہ کرونا کے باعث ہمارے لوگوں کو وہ تکالیف نہیں دیکھنی پڑی جو دیگر ممالک کو دیکھنے پڑیں، حکومت عوام کو مشکلات سے بچانے کیلئے پرعزم رہیں۔ اس موقع پر انہوں نے بتایا کہ تعمیراتی شعبے میں 400 ارب روپے کے پراجیکٹ شروع کرنے جا رہے ہیں۔ جب کہ حکومت احساس پروگرام کا کیس بجٹ بھی بڑھا رہی ہے۔

اسلام آباد میں وزیر اعظم کی معاون خصوصی برائے احساس پروگرام ڈاکٹر ثانیہ نشتر کے ہمراہ مشترکا پریس کانفرنس سے خطاب میں وفاقی وزیر اطلاعات و نشریات شبلی فراز کا کہنا تھا کہ کرونا کے باعث ہمارے لوگوں کو وہ تکالیف نہیں دیکھنی پڑی جو دیگر ممالک کو دیکھنے پڑیں، کرونا کی وفا کے باعث حکومت عوام کو مشکلات سے بچانے کے لیے پرعزم رہیں، اس سلسلے میں قومی رابطہ کمیٹی کے اجلاسوں کا مقصد تمام شعبوں میں روابط کو مضبوط کرنا ہے۔

وفاقی وزیر اطلاعات نے کہا کہ معشیت کے اثرات درمیانے طبقے یا غریب لوگوں پر زیادہ پڑھتے ہیں، یہ ہی وجہ ہے کہ حکومت مستحق طبقے کیلئے کام کر رہی ہے۔ تعمیراتی شعبے میں 400 ارب روپے کے پراجیکٹ شروع کرنے جا رہے ہیں۔ یہ منصوبے ہاؤسنگ پراجیکٹ کو تبدیل کر کے رکھ دیں گے۔ ہاؤسنگ پراجیکٹ سے نوکریوں کے وسیع مواقع پیدا ہوں گے۔ اس سلسلے میں ہاؤسنگ پراجیکٹ کے نقشوں سمیت تمام امور پر تفصیلی بات چیت ہوئی ہے، تعمیراتی شعبے سے منسلک افراد کو قرضے دینے کا میکنزم بھی زیر بحث آیا ہے، تعمیراتی شعبے کی ترقی سے معیشت بحال ہوگی۔

شبلی فراز نے مزید بتایا کہ وزیراعظم ہاؤس میں ہونے والے اہم اجلاس میں انہوں نے غریب اور مڈل کلاس کے لوگوں کے مسائل پر تفصیلی گفتگو ک۔ اجلاس کا مقصد کنسٹرکشن انڈسٹری کو درپیش مشکلات کا جائزہ لینا تھا۔ سروسز سیکٹر کے حکام بھی اجلاس میں شریک ہوئے۔ اجلاس میں کنسٹرکشن سیکٹر کے حوالے سے اچھی تجاویز سامنے آئیں۔ کنسٹرکشن کے حوالے سے روڈ شوز کی تجویز بھی سامنے ائی۔ کنسٹرکشن انڈسٹری کو اٹھانا وقت کی اہم ضرورت ہے۔ حکومتی پالیسیوں کے نتیجے میں غریب گھر خرید سکے گا۔ کنسٹرکشن انڈسٹری سے روزگار بھی ملے گا اور غریبوں کو گھر بھی ملیں گے۔

کانفرنس سے خطاب میں معاون خصوصی ثانیہ نشتر کا کہنا تھا کہ احساس ایمرجنسی کیش کا دائرہ کار مزید بڑھایا جا رہا ہے۔ جب کہ احساس ایمرجنسی کیش کا بجٹ 144ارب سے بڑھا کر 203ارب روپے کر دیا گیا ہے۔ احساس کیش پروگرام کو عالمی سطح پر پذیرائی حاصل ہوئی۔ پاکستان کو یہ اعزاز حاصل ہے کہ سماجی تحفظ کا پروگرام سب سے پہلے اور سب سے تیز رفتاری سے شروع کیا۔ یہ ایسا پروگرام ہے جس میں وزیراعظم بھی اپنی مرضی سے نہ تو کوئی کیس ڈال سکتے نہ نکال سکتے ہیں۔

انہوں نے کہا کہ ایک کروڑ 69لاکھ افراد کو رقم فراہم کرنے تک احساس کیش پروگرام جاری رہیگا۔ اس پروگرام میں میرٹ کو ملحوظ رکھنا ہماری اولین ترجیح ہے۔ احساس کیش پروگرام کا حتمی پورٹل بھی عوام کی سہولت کیلئے جاری کر دیا گیا ہے۔

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں