Home » اسکولوں سےمتعلق ہرصوبہ اپنےفیصلے کرسکتاہے،سعیدغنی

اسکولوں سےمتعلق ہرصوبہ اپنےفیصلے کرسکتاہے،سعیدغنی

by ONENEWS

ہمارےفیصلےسےکوئی ناراض ہوتاہےتوبرداشت کرلیں گے

وزیرتعلیم سندھ سعیدغنی نے کہا ہے کہ صوبے میں چھوٹی کلاسزکےتعلیمی ادارےکھولنےکی اجازت نہیں،صرف نویں اور دسویں جماعت کے طلبہ اسکول جارہے ہیں، ہمارےفیصلےسےکوئی ناراض ہوتاہےتوبرداشت کرلیں گے۔

ہفتےکی دوپہرحیدرآبادمیں صوبائی وزیرتعلیم سعیدغنی نےشہبازبلڈنگ میں پریس کانفرنس کرتےہوئے کہا کہ سندھ میں آخری مرحلےمیں کھلنےوالےاسکولوں کےفیصلےکوموخرکردیا ہے۔سندھ حکومت نے 21 ستمبرکوجواسکولزکھولنےتھےاُن کوایک ہفتے تک موخرکرکے28 ستمبرتک لےکرگئےہیں۔ انھوں نے کہا کہ اگراس وقت 20 بچوں پر ایس او پیز کیلیے مکمل عملدرآمد نہیں ہوا تو پھر100 بچوں پرکیسے ہوگا،اسی وجہ سے ایک ہفتہ مزید بڑھانے کا فیصلہ کیا۔ سعید غنی نے واضح کیا کہ اس وقت صرف نویں اور دسویں جماعت کےبچے اسکولز جا رہے ہیں۔کراچی کےاسکولوں سےمتعلق انھوں نےبتایا کہ صوبائی حکومت نےکراچی میں مزید 4 اسکول سیل کیے ہیں جبکہ کل تک ساڑے 14 ہزارٹیسٹ کرچکے ہیں۔

شفقت محمود سےمتعلق انھوں نے بتایا کہ وفاقی وزيرتعليم نےمجھ سےکہاکہ پہلےہميں اعتمادميں لےليتے،وفاقی وزیر تعلیم سے رابطہ کرکے صورتحال پر بات چیت کی،ہمارے لیے بچوں کی صحت تعلیم سے اہم ہے اوربچوں کی تعلیم بھی متاثر ہوئی ہے تاہم بچوں کی صحت کا خیال رکھنا ہے۔ اس حوالے سے انھوں نے مزید کہا کہ ہر صوبہ اپنے حالات کے مطابق ایسے فیصلےکرسکتاہے، ہمارےفیصلےسےکوئی ناراض ہوتاہےتوبرداشت کرلیں گے۔ سعید غنی نے یہ بھی کہا کہ وفاقی وزیرتعلیم سےدرخواست کی ہےکہ اجلاس بلائیں، اجلاس میں تمام صوبائی وزراءبیٹھ کرفیصلےکرلیں گے۔

اس کےعلاوہ ہفتے کوصوبائی وزیرتعلیم پنجاب ڈاکٹرمرادراس نے کہا ہے کہ اسکول کھولنے کےجاری کردہ شیڈول میں کسی قسم کی کوئی تبدیلی کا فیصلہ نہیں کیا گیا ہے۔ڈاکٹرمرادراس نےکہا کہ صوبےبھرمیں کویڈ19کی صورتحال کوہرسطح پر سختی سےمانیٹرکررہےہیں،جن اسکولوں سےکرونا وائرس کےکیسزکےحوالےسے شکایات موصول ہوئی ہیں انہیں فوری طورپرسیل کیا جارہا ہے۔ڈاکٹرمرادراس نےمزید کہا کہ طلبا،اساتذہ اوران کےخاندانوں کی صحت اورزندگی سے بڑھ کرکچھ نہیں ہے۔

ہفتےکی صبح ٹیوٹ کرتے ہوئے وفاقی وزیرتعلیم شفقت محمود نے کہا ہے کہ اسکول دوبارہ بندکرنےکاجلدبازی کافيصلہ تعليم کيلئےتباہ کن ہوگا۔ اپنے ٹویٹ میں شفقت محمود نے کہا کہ طلبہ کی صحت ہماری پہلی ترجيح ہے،کسی بھی فیصلےسےپہلےوزارت صحت کا مشورہ ليں گے۔

شفقت محمود نے مزید کہا کہ 6ماہ تعليمی اداروں کی بندش نےطلبہ کوبری طرح متاثرکيا،تعليمی ادارےکھولنےکافيصلہ بہت احتياط سےکياتھا۔گذشتہ روز شفقت محمود نے کہا تھا کہ تعلیمی اداروں کے کلاسز شروع کرنےکےشیڈول میں کوئی تبدیلی نہیں ہوئی اورتعلیمی اداروں میں دوسرے مرحلےمیں کلاسز23ستمبرسےہی شروع ہوں گی۔انھوں نے یہ بھی کہا تھا کہ 22 ستمبرکواین سی اوسی کےاجلاس میں حتمی فیصلہ کیا جائے گا،صورتحال یہی رہی توتعلیمی ادارے دیئے گئے شیڈول کے مطابق ہی کھلیں گے۔

You may also like

Leave a Comment